شریک ہوں اور تازہ ترین معلومات حاصل کریں

یعقوب پرواز

  • غزل


دل کے لٹنے پہ کیا کرے کوئی


دل کے لٹنے پہ کیا کرے کوئی
کس سے جا کر پتہ کرے کوئی

سوچتا ہوں کہ کس بھروسے پر
جان تم پر فدا کرے کوئی

یعنی عمر خضر تو حاصل ہو
چند سانسوں کا کیا کرے کوئی

ایک ہی تو صدائے مجنوں ہے
میرے دکھ کی دوا کرے کوئی

اس پہ لازم اسی کا ہو جانا
جس کو کچھ بھی عطا کرے کوئی

کوئی رستہ نکل ہی آتا ہے
اک ذرا آسرا کرے کوئی

گاہ چلتی بہ گاہ رکتی ہے
ایسی دھڑکن کا کیا کرے کوئی

جوں فرشتہ اجل کا آتا ہے
ایسے وعدہ وفا کرے کوئی

سخت مشکل ہے فی البدیہہ کہنا
چھید ہیرے میں کیا کرے کوئی


Leave a comment

+