شریک ہوں اور تازہ ترین معلومات حاصل کریں

مجروح سلطانپوری

  • غزل


ادائے طول سخن کیا وہ اختیار کرے


ادائے طول سخن کیا وہ اختیار کرے
جو عرض حال بہ طرز نگاہ یار کرے

بہت ہی تلخ نوا ہوں مگر عزیز وطن
میں کیا کروں جو ترا درد بے قرار کرے

قدم کو فیض جنوں سے وہ حوصلہ ہے نصیب
جو خار راہ کو بھی شمع رہ گزار کرے

جگائیں ہم سفروں کو اٹھائیں پرچم شوق
نہ جانے کب ہو سحر کون انتظار کرے

مثال ملتی ہے کتنوں کی اس دوانے سے
چمن سے دور جو بیٹھا غم بہار کرے

دیار جور میں رستہ ہے اک یہی ورنہ
کسے پسند ہے اے دل کہ سیر دار کرے

خدا کرے غم گیتی کا پیچ و تاب اے دوست
کچھ اور بھی تری زلفوں کو تابدار کرے

ستم کہ تیغ قلم دیں اسے جو اے مجروحؔ
غزل کو قتل کرے نغمے کو شکار کرے


Leave a comment

+