شریک ہوں اور تازہ ترین معلومات حاصل کریں

فرتاش سید

  • غزل


گندھ کے مٹی جو کبھی چاک پہ آ جاتی ہے


گندھ کے مٹی جو کبھی چاک پہ آ جاتی ہے
بات بے مہریٔ افلاک پہ آ جاتی ہے

آسمانوں پہ اڑو ذہن میں رکھو کہ جو چیز
خاک سے اٹھتی ہے وہ خاک پہ آ جاتی ہے

رنگ و خوشبو کا کہیں کوئی کرے ذکر تو بات
گھوم پھر کر تری پوشاک پہ آ جاتی ہے

بکھرا بکھرا سا ہے انداز تکلم ان کا
اور تہمت مرے ادراک پہ آ جاتی ہے

نخل محفوظ رہیں باد حوادث جو چلے
ایک آفت خس و خاشاک پہ آ جاتی ہے

چھوڑ جائے جو کوئی چاہنے والا فرتاشؔ
زندگانی رہ سفاک پہ آ جاتی ہے


Leave a comment

+