شریک ہوں اور تازہ ترین معلومات حاصل کریں

بدنام نظر

  • غزل


زہر پیے مدہوش اندھیری رات


زہر پیے مدہوش اندھیری رات
ناگن سی خاموش اندھیری رات

دن کی صورت مجھ کو بھی کھا جا آ کر
میں بھی ہوں بے ہوش اندھیری رات

شہروں میں خاموشی ہی خاموشی تھی
طوفاں تھا پرجوش اندھیری رات

کیا جانے کس نے اوڑھا میرا پیکر
میں خواب خرگوش اندھیری رات

چاندی جیسی کرنیں مجھ پر مت ڈالو
میرا تو سرپوش اندھیری رات

نیند کہاں میرے گھر آئے گی بدنامؔ
میں خانہ بر دوش اندھیری رات


Leave a comment

+