شریک ہوں اور تازہ ترین معلومات حاصل کریں

لالہ مادھو رام جوہر

  • غزل


تھوڑا ہے جس قدر میں پڑھوں خط حبیب کا


تھوڑا ہے جس قدر میں پڑھوں خط حبیب کا
دیکھا ہے آج آنکھوں سے لکھا نصیب کا

ہم مے کشوں نے نشہ میں ایسے کیے سوال
دم بند کر دیا سر منبر خطیب کا

صیاد گھات میں ہے کہیں باغباں کہیں
سارا چمن ہے دشمن جاں عندلیب کا

اپنی زبان سے مجھے جو چاہے کہہ لیں آپ
بڑھ بڑھ کے بولنا نہیں اچھا رقیب کا

آنکھیں سفید ہو گئیں جب انتظار میں
اس وقت نامہ بر نے دیا خط حبیب کا

قسمت ڈبونے لائی ہے دریائے عشق میں
اے خضر پار کیجئے بیڑا غریب کا

وہ بے خطا ہیں ان سے شکایت ہی کس لیے
جوہرؔ یہ سب قصور ہے اپنے نصیب کا

RECITATIONS فصیح اکمل



00:00/00:00 تھوڑا ہے جس قدر میں پڑھوں خط حبیب کا فصیح اکمل

Leave a comment

+