شریک ہوں اور تازہ ترین معلومات حاصل کریں

داؤد اورنگ آبادی

  • غزل


گلشن جگ میں ذرا رنگ محبت نیں ہے


گلشن جگ میں ذرا رنگ محبت نیں ہے
بلبل دل کوں کسی ساتھ اب الفت نیں ہے

آشنائی سیتی مردم کے ہوں از بس بیزار
رخ درپن کی طرف چشم کوں رغبت نیں ہے

کیا عجب ہے جو دیا جان کو یکبار پتنگ
تا سحر شمع کوں جلنے سیتی فرصت نیں ہے

کیوں گریباں کوں کیا چاک ز سر تا داماں
گل کوں بلبل سوں اگر طرز مروت نیں ہے

مجھ کوں باور نہیں پیغام زبانی قاصد
کیا سبب ہے کہ ترے ہاتھ کتابت نیں ہے

منتخب کر کے ورق دل پہ لکھے ہیں احباب
گرچہ ظاہر میں مرے شعر کی شہرت نیں ہے

ناتوانی ستی برجا ہے علامت نہ کرو
رنگ داؤدؔ کوں پرواز کی طاقت نیں ہے


Leave a comment

+