شریک ہوں اور تازہ ترین معلومات حاصل کریں

پریم کمار نظر

  • غزل


قدم قدم پر کی رسوائی پھسلا ہر اک زینے پر


قدم قدم پر کی رسوائی پھسلا ہر اک زینے پر
پریم کمار نظرؔ جی بھیجو لعنت بدن کمینے پر

اپنی بھی مشکل حل کر لو اس کا بھی کلیان کرو
اس کا راز اسی کو سونپو بوجھ نہ رکھو سینے پر

نیلے گرم سمندر سے تو ڈر کر کوسوں بھاگو ہو!
ریت میں چپو مار کے خوش ہو حیف تمہارے جینے پر

اپنے اندر باہر ''جم جم پھیلے مشک نصیبو دی''
چادر کا اجلا پن بھولو عطر نہ چھڑکو پسینے پر

تم کو کیا معلوم عذاب جسم کو کیسے جھیلتے ہیں
اک دو دن میں کام بناؤ بات نہ ٹالو مہینے پر


Leave a comment

+