شریک ہوں اور تازہ ترین معلومات حاصل کریں

مجروح سلطانپوری

  • غزل


یہ رکے رکے سے آنسو یہ دبی دبی سی آہیں


یہ رکے رکے سے آنسو یہ دبی دبی سی آہیں
یوں ہی کب تلک خدایا غم زندگی نباہیں

کہیں ظلمتوں میں گھر کر ہے تلاش دشت رہبر
کہیں جگمگا اٹھی ہیں مرے نقش پا سے راہیں

ترے خانماں خرابوں کا چمن کوئی نہ صحرا
یہ جہاں بھی بیٹھ جائیں وہیں ان کی بارگاہیں

کبھی جادۂ طلب سے جو پھرا ہوں دل شکستہ
تری آرزو نے ہنس کر وہیں ڈال دی ہیں بانہیں

مرے عہد میں نہیں ہے یہ نشان سربلندی
یہ رنگے ہوئے عمامے یہ جھکی جھکی کلاہیں

RECITATIONS نعمان شوق



00:00/00:00 یہ رکے رکے سے آنسو یہ دبی دبی سی آہیں نعمان شوق

Leave a comment

+