شریک ہوں اور تازہ ترین معلومات حاصل کریں

غلام ربانی تاباں

  • غزل


سواد غم میں کہیں گوشۂ اماں نہ ملا


سواد غم میں کہیں گوشۂ اماں نہ ملا
ہم ایسے کھوئے کہ پھر تیرا آستاں نہ ملا

غموں کی بزم کہ تنہائیوں کی محفل تھی
ہمیں وہ دشمن تمکیں کہاں کہاں نہ ملا

عجیب دور ستم ہے کہ دل کو مدت سے
نوید غم نہ ملی مژدۂ زیاں نہ ملا

کسے ہے یاد کہ سعی و طلب کی راہوں میں
کہاں ملا ہمیں تیرا نشاں کہاں نہ ملا

ادھر وفا کا گلا ہے کہ دل لہو نہ ہوا
ادھر ستم کو شکایت کہ قدرداں نہ ملا

لبوں کو نطق کا اعجاز تو ملا تاباںؔ
مگر سکوت کا پیرایۂ بیاں نہ ملا


Leave a comment

+