شریک ہوں اور تازہ ترین معلومات حاصل کریں

فرحان حنیف وارثی

  • غزل


مکان چہرے دکان چہرے


مکان چہرے دکان چہرے
ہماری بستی کی جان چہرے

اجاڑ نسلوں کے نوحہ گر ہیں
خزاں رسیدہ جوان چہرے

دھواں دھواں منظروں کا حصہ
خیال خوشبو گمان چہرے

روایتوں کے نقوش جن پر
وہ کھنڈروں سے مکان چہرے

کوئی تأثر ہو زندگی کا
کریں خوشی غم بیان چہرے

کوئی نہیں ہے کسی سے واقف
نگر میں سب بے نشان چہرے

حنیفؔ قدریں بدل چکی ہیں
نہ ڈھونڈ وہ درمیان چہرے


Leave a comment

+