شریک ہوں اور تازہ ترین معلومات حاصل کریں

تابش دہلوی

  • غزل


نفس کی زد پہ ہر اک شعلۂ تمنا ہے


نفس کی زد پہ ہر اک شعلۂ تمنا ہے
ہوا کے سامنے کس کا چراغ جلتا ہے

ترا وصال تو کس کو نصیب ہے لیکن
ترے فراق کا عالم بھی کس نے دیکھا ہے

ابھی ہیں قرب کے کچھ اور مرحلے باقی
کہ تجھ کو پا کے ہمیں پھر تری تمنا ہے

RECITATIONS تابش دہلوی



00:00/00:00 نفس کی زد پہ ہر اک شعلۂ تمنا ہے تابش دہلوی

Leave a comment

+